مک صفحو » Urdu page

Urdu page

عوام کو مت بانٹو،
پیار اور اتفاق و یکجھتی کو
عام کرو، اور محبت پھئلائو۔

:: :: :: :: :: ::

بس کہ دشوار ہے ہر کام کا آسان ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انسان ہونا

:: :: :: :: :: ::

’خون اپنا ہو يا پرايا ہو

نسلِ آدم کا خون ہے آخر

جنگ مشرق ميں ہو کہ مغرب ميں

امنِ عالم کا خون ہے آخر

بم گھروں پر گريں کہ سرحد پر

روح تعمير زخم کھاتی ہے

کھيت اپنے جليں کہ اوروں کے

زيست فاقوں سے تلملاتی ہے

ٹينک آگے بڑھيں، کہ پيچھے ہٹيں

کوکھ دھرتی کی بانجھ ہوتی ہے

فتح کا جشن ہو کہ ہار کا سوگ

زندگی ميتوں پر روتی ہے

جنگ تو خود ہی ايک مسئلہ ہے

جنگ کيا مسئلوں کا حل دے گی

آگ اور خون آج بخشے گی

بھوک اور احتياج کل دے گی

اس ليے اے شريف انسانو !

جنگ ٹلتی رہے تو بہتر ہے

آپ اور ہم سبھی کے آنگن ميں

شمع جلتی رہے تو بہتر ہے

برتری کے ثبوت کی خاطر

خوں بہانا ہی کيا ضروری ہے

گھر کی تاريکياں مٹانے کو

گھر جلانا ہی کيا ضروری ہے

جنگ کے اور بھی تو ميدان ہيں

صرف ميدانِ کشت و خوں ہی نہيں

حاصلِ زندگی خِرد بھی ہے

حاصلِ زندگی جنوں ہی نہيں

آؤ اس تيرہ بخت دنيا ميں

فکر کی روشنی کو عام کريں

امن کو جن سے تقويت پہنچے

ايسی جنگوں کا اہتمام کريں

جنگ، وحشت سے، بربريت سے

امن، تہذيب و ارتقاء کے ليے

جنگ، مرگ آفريں سياست سے

امن، انسان کی بقاء کے لیے

جنگ، افلاس اور غلامی سے

امن، بہتر نظام کي خاطر

جنگ بھٹکي ہوئي قيادت سے

امن، بےبس عوام کي خاطر

جنگ، سرمائے کے تسلط سے

امن، جمہور کي خوشي کے ليے

جنگ، جنگوں کے فلسفے کے خلاف

امن، پُرامن زندگي کے ليے‘

(ساحر لدھيانوي)ا

  • – — – – – – – –
  • کافر کافر میں بھی کافر
    کافر کافر تُو بھی کافر۔۔۔۔
    ***************
    میں بھی کافر تُو بھی کافر
    پھولوں کی خوشبو بھی کافر
    لفظوں کا جادُو بھی کافر
    یہ بھی کافر وہ بھی کافر
    فیض بھی اور منٹو بھی کافر
    نُور جہاں کا گانا کافر
    مکدونلدز کا کھانا کافر
    برگر کافر کوک بھی کافر
    ہنسنا بدعت جوک بھی کافر
    طبلہ کافر ڈھول بھی کافر
    پیار بھرے دو بول بھی کافر
    سُر بھی کافر تال بھی کافر
    بھنگڑا، اتن، دھمال بھی کافر
    دھادرا،ٹھمری،بھیرویں کافر
    کافی اور خیال بھی کافر
    وارث شاہ کی ہیر بھی کافر
    چاہت کی زنجیر بھی کافر
    زِِندہ مُردہ پیر بھی کافر
    نذر نیاز کی کھیر بھی کافر
    بیٹے کا بستہ بھی کافر
    بیٹی کی گُڑیا بھی کافر
    ہنسنا رونا کُفر کا سودا
    غم کافر خوشیاں بھی کافر
    جینز بھی اور گٹار بھی کافر
    ٹخنوں سے نیچے باندھو تو
    اپنی یہ شلوار بھی کافر
    فن بھی اور فنکار بھی کافر
    جو میری دھمکی نہ چھاپیں
    وہ سارے اخبار بھی کافر
    یونیورسٹی کے اندر کافر
    ڈارون بھائی کا بندر کافر
    فرائڈ پڑھانے والے کافر
    مارکس کے سب متوالے کافر
    میلے ٹھیلے کُفر کا دھندہ
    گانے باجے سارے پھندہ
    مندر میں تو بُت ہوتا ہے
    مسجد کا بھی حال بُرا ہے
    کُچھ مسجد کے باہر کافر
    کُچھ مسجد کے اندر کافر
    مُسلم مُلک میں اکثر کافر
    کافر کافر میں بھی کافر
    کافر کافر تُو بھی کافر۔۔۔۔!!!
    (سلمان حیدر)

 

جواب ڇڏيو

لاگ ان ٿيڻ لاءِ هيٺ پنهنجي تفصيل ڀريو يا ڪنهن آئڪان تي ڪلڪ ڪريو:

WordPress.com Logo

توهان پنهنجو WordPress.com اڪائونٽ استعمال ڪندي رايو ڏئي رهيا آهيو. لاگ آئوٽ ڪريو /  تبديل ڪريو )

Google photo

توهان پنهنجو Google اڪائونٽ استعمال ڪندي رايو ڏئي رهيا آهيو. لاگ آئوٽ ڪريو /  تبديل ڪريو )

Twitter picture

توهان پنهنجو Twitter اڪائونٽ استعمال ڪندي رايو ڏئي رهيا آهيو. لاگ آئوٽ ڪريو /  تبديل ڪريو )

Facebook photo

توهان پنهنجو Facebook اڪائونٽ استعمال ڪندي رايو ڏئي رهيا آهيو. لاگ آئوٽ ڪريو /  تبديل ڪريو )

%s سان رابطو پيو ڪري